Pakistan Writers Welfare Association

میں ایک مزدور ہوں ! تحریر : وسیم قریشی

50

برخوردار !
کر مزدوری….. کھا چوری…
چوہدری صاحب!
کر مزدوری.. کھا چوری..
اب فقط محاوروں کی حد تک ہی اچھا لگتا ہے.
اور اس محاورے میں جس چوری کا زکر کیا گیا ہے وہ چوری بھی دیسی گھی کی ہوا کرتی تھی.
آج تو مزدوری سے دو وقت کی روٹی بھی پوری نہیں ہوتی چوہدری صاحب….
برخوردار !
محنت کر…… محنت….
چوہدری صاحب !
محنت کر کر کے میرے ہاتھ کی جلد اس قدر سخت ہو گئی ہے کہ اب تو ہاتھ کی ہتھیلی پر جلتے ہوئے کوئلے بھی اثر نہیں کرتے….
اب اس سے زیادہ اور کیا محنت کروں چوہدری صاحب؟
برخوردار !
کچھ بھی ہو لیکن اپنے بچوں کو تعلیم کے بہترین زیور سے آراستہ ضرور کروانا…
چوہدری صاحب !
جب گھر میں جوان بچیاں بیٹھی ہوں.
اور
بالوں میں چاندی اور سفیدی آ گئی ہو..
برسات میں گھر کی چھت بھی ساتھ ساتھ ٹپکتی ہو.
تو تعلیم نہیں..
روٹی اور جوان بچیوں کی شادی کی فکر لاحق ہوتی ہے..
برخوردار !
تعلیم کی بدولت تیرا کوئی بچہ کسی اعلیٰ عہدے پر فائز ہو سکتا ہے.
چوہدری صاحب !
جس معاشرے میں چپڑاسی کی نوکری بھی چھ لاکھ روپے میں بکتی ہو.
وہاں مزدور کا بچہ اعلیٰ عہدوں کیلئے لاکھوں روپے کہاں سے لائے گا؟
برخوردار !
جون کا مہینہ ہے…
تپتی گرمی اور سورج کی تپش میں انسان بھی پگھل جاتے ہیں.
اپنے بچوں کیلئے کوئی یو پی ایس کا انتظام کیا کہ نہیں؟
چوہدری صاحب !
مزدور کا بچہ بھی مزدور ہی ہوتا ہے.
گرمی کی تپش فاقوں کے درد سے زیادہ خطرناک نہیں ہوتی چوہدری صاحب….
برخوردار !
حکومت مزدوروں کیلئے اقدامات کر رہی ہے..
چوہدری صاحب !
کیا حکومت میں یا کسی اسمبلی میں یا قانون بنانے والوں میں کوئی مزدور بیٹھا ہے؟
برخوردار !
کیا مطلب ہے تیرا؟
چوہدری صاحب !
ایک مزدور کی مشکلات اور مسائل کو ایک مزدور ہی سمجھ سکتا ہے…
آپ جیسے چوہدری صاحبان نہیں…
المیہ تو یہی ہے چوہدری صاحب کہ حکومت اور اعلیٰ عہدوں پر بھی آپ جیسے چوہدری صاحبان براجمان ہیں.
اے سی کی پیداوار کیا جانے کہ تپتے سورج کے تلے گرمی سے جلتا ہوا ایک غریب کا کوٹھڑا….
اور تپش میں پگھلتا جسم کیا تکلیف دیتا ہے؟
برخوردار !
ظلم اور ناانصافی کے خلاف قانون موجود ہے.
چوہدری صاحب !
جب ظلم کے خلاف قانون بنانے کا اختیار ظالم کے پاس ہو تو ظلم کبھی ختم نہیں ہوتا….
برخوردار !
مزدور کے بچوں کیلئے تعلیمی پالیسی بھی بنائی جا رہی ہے……
چوہدری صاحب !
جب ان پڑھ اور جاہل لوگ تعلیم یافتہ لوگوں پر مسلط ہوتے ہیں تو بھلا ان پڑھ کیا جانے کہ تعلیمی پالیسیاں کیسے بنائی جاتی ہیں؟؟
برخوردار !
وراثت میں اپنی اولاد کیلئے کیا چھوڑ کر جاوے گا؟
چوہدری صاحب !
مزدور اپنی آنے والی نسلوں کیلئے وراثت میں "قرض” چھوڑ کر مرتا ہے…
جائداد، محلات یا کاروبار نہیں…
ہم مزدوروں کے تو جنازے پر بھی زیادہ تعداد قرض لینے والوں کی ہوتی ہے…
تاکہ مرنے والے کا کوئی ولی وارث قرض کی ادائیگی کا بیڑہ اٹھانے کا اعلان کرے…
برخوردار !
تم لوگوں کا رزق بھی ہم جیسے لوگوں کی وجہ سے ہے..
چوہدری صاحب !
آپ جیسے لوگوں کی یہ شان و شوکت یہ چوہدراہٹ یہ تکبر اور غرور بھی مجھ جیسے لوگوں کی وجہ سے ہے.
کیونکہ!
"میں ایک مزدور ہوں”…
اچھا چوہدری صاحب…
چلتا ہوں…
دو دن سے مزدوری نہ ملنے کے سبب بچے فاقہ کاٹ رہے ہیں……
آج الحمداللہ…
مزدوری ملی ہے..
بچوں کا پیٹ بھر جائے گا…
کل کا بھی میرا اللہ وارث ہے….
اللہ حافظ!

جواب چھوڑیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا.